میں شاعر تو نہیں

کھلتا کسی پہ کیوں میرے دل کا معاملہ
شعروں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے

——————————————–

ہم محبت میں بھی توحید کے قائل ہیں فراز

ایک ہی شخص کو محبوب بنائے رکھنا

کہیں وہ آ کے مٹا دیں نہ انتظار کا لطف
کہیں قبول نہ ہو جائے التجا میری

حسرتؔ جے پوری

ﺍﮮ ﻧﺌﮯ ﺳﺎﻝ ﺑﺘﺎ، ﺗُﺠﮫ ﻣﻴﮟ ﻧﻴﺎ ﭘﻦ ﮐﻴﺎ ﮨﮯ؟
ﮨﺮ ﻃﺮﻑ ﺧَﻠﻖ ﻧﮯ ﮐﻴﻮﮞ ﺷﻮﺭ ﻣﭽﺎ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ
ﺭﻭﺷﻨﯽ ﺩﻥ ﮐﯽ ﻭﮨﻲ ﺗﺎﺭﻭﮞ ﺑﮭﺮﻱ ﺭﺍﺕ ﻭﮨﯽ
ﺁﺝ ﮨﻢ ﮐﻮ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﻲ ﮨﮯ ﮨﺮ ﺍﻳﮏ ﺑﺎﺕ ﻭﮨﯽ
ﺁﺳﻤﺎں ﺑﺪﻻ ﮨﮯ ﺍﻓﺴﻮﺱ، ﻧﺎ ﺑﺪﻟﯽ ﮨﮯ ﺯﻣﻴﮟ
ﺍﻳﮏ ﮨﻨﺪﺳﮯ ﮐﺎ ﺑﺪﻟﻨﺎ ﮐﻮﺋﻲ ﺟﺪﺕ ﺗﻮ ﻧﮩﻴﮟ
ﺍﮔﻠﮯ ﺑﺮﺳﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﻗﺮﻳﻨﮯ ﺗﻴﺮﮮ
ﮐﺴﮯ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﻧﮩﻴﮟ ﺑﺎﺭﮦ ﻣﮩﻴﻨﮯ ﺗﻴﺮﮮ
ﺟﻨﻮﺭﻱ، ﻓﺮﻭﺭﻱ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺭﭺ ﻣﻴﮟ ﭘﮍﮮ ﮔﻲ ﺳﺮﺩﻱ
ﺍﻭﺭ ﺍﭘﺮﻳﻞ، ﻣﺌﻲ ﺍﻭﺭ ﺟﻮﻥ ﻣﻴﮟ ﮨﻮﮔﻲ ﮔﺮﻣﻲ
ﺗﻴﺮﺍ ﻣَﻦ ﺩﮨﺮ ﻣﻴﮟ ﮐﭽﮫ ﮐﮭﻮﺋﮯ ﮔﺎﮐﭽﮫ ﭘﺎﺋﮯ ﮔﺎ
ﺍﭘﻨﯽ ﻣﻴﻌﺎﺩ ﺑَﺴﺮ ﮐﺮ ﮐﮯ ﭼﻼ ﺟﺎﺋﮯﮔﺎ
ﺗﻮ ﻧﻴﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺩﮐﮭﺎ ﺻﺒﺢ ﻧﺌﻲ، ﺷﺎﻡ ﻧﺌﯽ
ﻭﺭﻧﮧ ﺍِﻥ سب ﻧﮯ ﺩﻳﮑﮭﮯ ﮨﻴﮟ ﻧﺌﮯ ﺳﺎﻝ ﮐﺌﯽ
ﺑﮯ ﺳﺒﺐ ﻟﻮﮒ کیوں ﺩﻳﺘﮯ ﮨﻴﮟ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﺑﺎﺩﻳﮟ
ﻏﺎﻟﺒﺎ ﺑﮭﻮﻝ ﮔﺌﮯ ﻭﻗﺖ ﮐﯽ ﮐﮍﻭﻱ ﻳﺎﺩﻳﮟ
ﺗﻴﺮﯼ ﺁﻣﺪ ﺳﮯ ﮔﮭﭩﯽ ﻋﻤﺮ ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﺳﺐ ﮐﯽ
ﻓﻴﺾ ﻧﮯ ﻟﮑﮭﯽ ﮨﮯ ﻳﮧ ﻧﻈﻢ ﻧﺮﺍﻟﮯ ﮈﮬﺐ ﮐﯽ
‏( ﻓﯿﺾ ﺍﺣﻤﺪ ﻓﯿﺾؔ )
 
آہستہ چل زندگی، ابھی
 کچھ قرض چکانا باقی ہے
کچھ درد مٹانا باقی ہے
کچھ فرض نبھانا باقی ہے
رفتار میں تیرے چلنے سے
کچھ روٹھ گئے، کچھ چھوٹ گئے
روٹھوں کو منانا باقی ہے
روتوں کو ہنسانا باقی ہے
کچھ حسرت ابھی ادھوری ہے
کچھ کام بھی اور ضروری ہے
خواہش جو گھٹ گئی اس دل میں
اس کو دفنانا باقی ہے
کچھ رشتے بن کر ٹوٹ گئے
کچھ جڑتے جڑتے چھوٹ گئے
ان ٹوٹے چھوٹے رشتوں کے
زخموں کو مٹانا باقی ہے
تو آگے چل میں آتا ہوں
کیا چھوڑ تجھے جی پاؤنگا
ان سانسوں پر حق ہے جن کا
ان کو سمجھانا باقی ہے
آہستہ چل زندگی، ابھی
کچھ قرض چکانا باقی ہے
 http://www.poemhunter.com/poem/aahista-chal-jindgi/
———————————————————————————————————————
 سکھ میں ہوتا ہے حافظہ بیکار
دکھ  میں   الللہ     یاد آتا ہے
———————————————————————————————————————–
اشعار مرے یوں تو زمانے کے لئے ھیں
کچھ بات فقط ان کو سنا نے کے لئے ھیں
 ———————————————————————————————————————–
 محشر میں گئے شیخ تو اعمال ندارد
جس مال کے تاجر تھے وہی مال ندارد
 ———————————————————————————————————————–
 image shayari for بڑی تلاش سے ملتی ہے زندگی اے دوست<br /><br /> قضا کی طرح پتا پوچھتی نہیں آتی...
————————————————————————————————————————
image shayari for آگاہ اپنی موت سے کوئی بشر نہیں<br /><br /> سامان سو برس کا ہے پل کی خبر نہیں...
————————————————————————————————————————
image shayari for قید_حیات و بند_غم اصل میں دونوں ایک ہیں موت سے پہلے آدمی غم سے نجات پاے کیوں...
————————————————————————————————————————
image shayari for ابتدا وہ تھی کہ جینے کے لیے مرتا تھا میں انتہا یہ ہے کہ مرنے کی بھی حسرت نہ رہی...
————————————————————————————————————————
 image shayari for ٹھہر کے پاؤں کے کانٹے نکالنے والے یہ ہوش ہے تو جنوں کامیاب کیا ہوگا...
————————————————————————————————————————
 علم میں بھی سرور ہے لیکن
یہ وہ جنت ہے جس میں حور نہیں
 ———————————————————————————————————————–
بھیج دی تصویر اپنی ان کو یہ لکھ کر شکیلؔ
آپ کی مرضی ہے چاہے جس نظر سے دیکھیے

———————————————————————————————————-

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s