Human cloning, stem cell research. An Islamic perspective.

1. Cloning In The Light Of Shariah–Islamic Fiqh Academy (India)

http://www.ifa-india.org/english.php?do=home&pageid=english_Library

2. Human cloning, stem cell research. An Islamic perspective.

http://smj.org.sa/index.php/smj/article/view/6789

3. Human Cloning in Muslim Ethics by by Ebrahim Moosa

http://www.academia.edu/273406/Human_Cloning_In_Muslim_Ethics

4. Question: Here in the US, there is much debate about the issue of cloning and its implications. At the moment, federal funds have been banned by the president from being used for this purpose. Muslim scholars also seem to be divided on this issue. I want to know the status of cloning in Islam.

Answer: Islam does not in any way condemn man’s freedom in scientific inquiry unless it has ethical or moral implications. Cloning is a step forward in this direction. Human cloning, generally defined as the production of two genetically identical individuals, apparently cannot be objected to. However, human cloning is in a very very rudimentary stage at the moment. Currently, it is even very difficult to say whether science will ever succeed in this objective or not. It is also quite impossible to say what exactly will be the result. Cloning an adult sheep was extremely difficult to do; over 270 attempts were needed before Dolly was born. Many foetal lambs did not survive the early stages of development. Those lambs that were carried to term were born with health problems, including malformed kidneys, and all but Dolly subsequently died. See for example, The Washington Times, ‘Before there was Dolly, there were Disasters'(March 11, 1997).

Furthermore, there are several unanswered questions at the moment: Will genetically identical people be physically and behaviourally identical, too? Will they have identical personalities? What if a clone is cloned again, and again? What would be the result and status of these subsequent ‘beings’? Will it be possible to clone the human soul, along with the body and if it is possible to clone the soul, what would this mean? In contrast, if the body is cloned, but not the soul, what would this mean? Until scientists are able to say something definite regarding these questions, a final verdict on human cloning would just be a wild guess.

For the moment, the only thing which can be said with certainty is that research and investigation in the area of human cloning cannot be objected to. Scientists say that human embryo research and embryo cloning can be used to conduct research into the development of contraceptives, in studies aimed at understanding the causes of human infertility and its solutions, in research involving genetic testing, genetic engineering, disease diagnosis, prevention and treatment, and tests on various medicines and medical procedures.

All this of course, cannot be disapproved in any way, unless, of course, something unethical comes up.

http://www.al-mawrid.org/index.php/articles/view/your-questions-answered77

منکر نکیر

سوال:

منکر نکیر کون ہیں۔ اسلام کا ان کے بارے میں تصور کیا ہے۔ ان کے میت سے سوالات اور ان کے جواب پر رد عمل کے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے۔

جواب:

قرآن مجید میں احوال برزخ کے حوالے سے زیادہ تفصیلی بیانات نہیں ہیں۔ لیکن اس سے بہرحال یہ ضرور معلوم ہو جاتا ہے کہ مرنے کے بعد اور قیامت سے پہلے بھی کچھ احوال ضرور پیش آتے ہیں۔ مثال کے طور پر قرآن مجید میں شہدا کے نعمتوں سے بہرہ مند ہونے کا ذکر موجود ہے اسی طرح آل فرعون کے صبح شام عذاب پر پیش جانے کا تذکرہ بھی قرآن مجید میں ہوا ہے۔

عذاب قبر یا احوال قبر کے حوالے سے احادیث میں جو باتیں بیان ہوئی ہیں ان کا تعلق اصل میں احوال برزخ سے ہے لیکن اس کے لیے قبر کا لفظ ہی استعمال ہوا ہے۔ یہ طریقہ غالبا اس لیے اختیار کیا گیا ہے کہ ہم مردے کو قبر ہی دفن کرتے ہیں تاکہ ہمارے اس مشاہدے کی رعایت رہے۔

منکر نکیر کے حوالے سے جو بات آپ نے ذکر کی وہ ترمذی کی روایت بیان ہوئی ہے۔

عن أبي هريرة قال قال رسول الله إذا قبر الميت أو قال أحدكم أتاه ملكان أسوادان أزرقان يقال لأحدهما منكر والآخر نكير فيقولان ما كنت تقول في هذا الرجل فيقول ما كان يقول هو عبد الله ورسوله أشهد أن لاإله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله فيقولان قد كنا نعلم أنك تقول هذا ثم يفسح له في قبره سبعون ذراعا في سبعين وينور له فيه ثم يقال له نم فيقول أرجع إلى أهلي فأخبرهم فيقولان نم نومة العروس الذي لا يوقظه إلا أحب أهله حتى يبعثه الله من مضجعه ذلك وإن كان منافقا قال سمعت الناس يقولون فقلت مثلهم لا أدري فيقولان قد كنا نعلم أنك تقول هذا فيقال للأرض التئمي عليه فتلتئم عليه حتى تختلف أضلاعه فلا يزال فيها معذبا حتى يبعثه الله من مضجعه ذلك

“حضرت ابوہریرہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب میت کو قبر میں رکھا جاتا ہے تو اس کے پاس کالے نیلے دوفرشتے آتے ہیں ان میں سے ایک کو منکر کہا جاتا ہے اور دوسرے کو نکیر کہا جاتا ہے۔ وہ دونوں پوچھتے ہیں تم اس آدمی کے بارے میں کیا کہتے رہے ہو تو وہ وہی کہتا ہے جو وہ (دنیا میں) کہتا رہا ہے۔ یہ اللہ کے بندے اور رسول ہیں اور میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی الہ نہیں اور محمد اللہ کے بندے اور اس کے رسول ہیں۔ تو وہ کہتے ہیں ہم جانتے تھے کہ تم یہی کہو گے پھر وہ اس کی قبر کو ستر ستر ہاتھ کھول دیتے ہیں اور اس کے اس میں روشنی کر دیتے ہیں پھر وہ اسے کہتے ہیں سوجا لیکن وہ کہتا ہے میں اپنے گھر والوں کی طرف پلٹ کر ان کو بتاتا ہوں۔ لیکن وہ اسے کہتے ہیں تو اس دلہن کی طرح سوجا جسے اس کے محبوب کے سوا کوئی نہیں اٹھاتا یہاں تک کہ اسے اس کے اس بستر سے اس کا پرودگار اٹھا کھڑا کرے۔ اگر منافق ہوا تو وہ یہ کہے گا کہ ان کے بارے میں نے لوگوں کو جوکہتے سنا وہی میں نے کہہ دیا۔ میں نہیں جانتا۔ وہ کہیں گے ہمیں معلوم تھا کہ تم یہی کہو گے۔ پھر قبر سے کہا جائے گا کہ اس پر تنگ ہو جائے وہ اس پر تنگ ہو جائے گی یہاں تک کہ اس کی پسلیاں ایک دوسرے میں گھس جائيں گی۔ وہ اسی طرح عذاب میں رہے گا یہاں تک کہ اللہ اس سے اس کے بستر سے اٹھا کھڑا کرے۔”

اس روایت میں جو باتیں بیان ہوئی ہیں ان سے ایک بات تو بالکل واضح محسوس ہوتی ہے کہ اس میں وہ احوال بیان ہوئے ہیں جو نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے کے مسلمانوں اور منافقین کو عالم برزخ میں پیش آئیں گے۔ اب سوال یہ ہے کہ کیا بعد کے لوگوں کے ساتھ بھی یہی سوال و جواب ہوں گے۔ بالعموم علما نے اس کا جواب اثبات میں دیا ہے۔ میرا رجحان یہ ہے کہ عالم برزخ میں ہر شخص کو یہ جتا دیا جائے گا کہ اسے کس گروہ میں شمار کیا گیا ہے اور اس کی اس حالت کے اعتبار ہی سے وہ نعمت یا نقمت کی حالت میں ہوگا۔ البتہ سوالات اس کے احوال کے مطابق ہوں گے جن سے اس کے ایمان وعمل کی دنیا میں جو نوعیت تھی وہ واضح ہو جائے۔

طالب محسن

http://www.al-mawrid.org/index.php/questions/question_urdu/1642

اپني اپني فقہ پر اصرار

سوال:

يہ بات اظہر من الشمس ہے کہ اللہ کا دين اسلام ہے۔ اس کے ماننے والے سبھي مسلمان ہيں۔ يہ حقيقت معلوم ہونے کے باوجود لوگ اپني اپني فقہ کو چھوڑ کر اسلام ميں داخل ہونے کو تيار نہيں ہيں۔ اس کا پس منظر کيا ہے؟

(بابر حسين)


جواب:

اسلام ميں داخل ہونے سے کيا مراد ہے۔ اگر نبي صلي اللہ عليہ وسلم زندہ ہوں اور ہمارے پاس ان سے دين سيکھنے اور جاننے کا براہ راست موقع ہو تو کسي فقہ کے ساتھ تمسک کي کوئي گنجايش نہيں ہے۔ عملاّ معاملہ يہ ہے کہ ہم قرآن و سنت کے عالم ہوں تب بھي بہت سے معاملات ميں ہميں دوسرے علما کي راۓ اور سوچ سے استفادہ کرنا پڑتا ہے۔ عام آدمي جو قرآن و سنت سے براہ راست استفادہ نہيں کر سکتا وہ علما کي راۓ قبول کرنے کے سوا کوئي اور راستہ نہيں رکھتا ہے۔ اس کو يہ مشورہ دينا مہلک ہے کہ تم براہ راست قرآن و سنت سے جو کچھ سمجھ ميں آتا ہے اسے اختيار کرو اور کسي عالم کي راۓ اور تحقيق کي طرف نگاہ اٹھا کر نہ ديکھو۔ عام آدمي کو صحيح مشورہ يہي ہے کہ وہ قرآن و سنت ہي کو دين کا ماخذ جانے اور علما سے اسي راۓ اور قبول کرے جو اسے قرآن وسنت کے دلائل پر مبني لگتي ہو۔ اگر کسي شخص کا اختلاف اس کے سامنے آۓ تو وہ اس اختلاف کو اپني استعداد کي حد تک دلائل ہي کي بنا پر رد کرے اور اس اختلاف کي حقيقت کو سمجھنے ميں اپنے ديني رہنما ہي سے مدد لے۔ ليکن اگر اسے محسوس ہو کہ اختلاف کرنے والے کي راۓ قرآن و سنت سے زيادہ قريب ہے تو اسے اختيار کرے اور اپنے گروہ کے ساتھ وابستگي کو تعصب نہ بننے دے۔ يہاں يہ بات واضح رہے کہ اپنے گروہ کي راۓ ساتھ اصرار اگر اللہ اور رسول کي اطاعت کے جذبے کے ساتھ ہو تو مطلوب ہے۔ تقليد انساني مجبوري ہے۔ اسے صرف اس وقت برا قرار دينا چاہيے جب يہ حق کے مقابلے ميں کھڑي ہو جائے اور بندہ جانتے بوجھتے حق کا انکار کر دے۔


طالب محسن

What is Victory

On Mon, Nov 5, 2012 at 11:06 AM, Shakeel Ashraf <shakeel.ashraf@yahoo.com> wrote:

إِذَا جَاءَ نَصْرُ اللَّهِ وَالْفَتْحُوَرَأَيْتَ النَّاسَ يَدْخُلُونَ فِي دِينِ اللَّهِ أَفْوَاجًا

فَسَبِّحْ بِحَمْدِ رَبِّكَ وَاسْتَغْفِرْهُ إِنَّهُ كَانَ تَوَّابًا

“When the help comes from Allah, and victory (is granted),

and you see people entering Allah’s religion in multitudes,

then extol the praise of your Lord and pray to Him for forgiveness. For He indeed is ever disposed to accept repentance.” (Surah Al-Nasr#110)

It was a leisure time on a weekend and I was with my friend Ahmad who shared his study of the above Surah with me. According to him the victory, which facilitated entry of great number of people in Islam, is not limited to victory in war but it includes everything, which imparts attractiveness to Islam. He cited an example of achievements during Muslim rule in Spain. He was very emphatic on ‘attractiveness’, which as stated by him is an important term in management studies. There seems no apparent flaw in this thinking at macro level. However I would dare to put it under a microscope.

Before going further let me try to scribe my friend’s profile.  He can genuinely be called a true aspirant of reform in the Ummah. He is most focused on quality education for the community, which is a pre requirement to excel in any field. He advocates that the community should stay away from all sorts of activism including politics. Internal strengthening of community with emphasis on education and economics is his passion. Once I heard him saying that Muslims should learn from Jews who rule the world by proxy. At another occasion he said if Indian Muslims outnumber in cracking career competitions, non-Muslims will be attracted and will embrace Islam making it a religion of majority in India. My comments are reserved on the preceding two statements of him.

The thinking is quite popular among enthusiastic class of Muslim professionals, who probably think, they are the shining stars studded in the sky of Islam and disbelievers are innocent children amused by their attractiveness. They should not forget that the opponents in the race of worldly excellence are dajjals. Only true believers can read what is written on dajjal’s forehead. There is attractiveness in truth but temptation towards false attraction is very much in action for the test of mankind. Allah sent more than a hundred thousand of messengers with attractiveness of truth but their beneficiaries in mankind remain in minority till today. According to Quran, it is Allah who appointed enemies to his own messengers – “Thus have We appointed unto every prophet an adversary – devils of humankind and jinn ……. 6:112”.

Let us compare the coveted term ‘attractiveness’ with a Quraanic word ‘ زُيِّنَ  zuiiena’ which means beautified. When I searched in Quran I found that it is mostly used for temptation and enticement towards falsehood (3:14, 6:108, 10:12, 15:39, 18:7, 27:4, 35:8).

For the much-talked golden age of Islam I would like to quote a question answer with Dr Israr Ahmad Marhoom, in the following lines.

 

“Q: We are entering the 21st century. Up till the 11th century it was the peak period for the Muslims, afterwards their decline started. The West benefited from our knowledge and progressed, and now we are dragging behind.

A: I believe that the period which you describe as “golden” was also a period of darkness according to the perspective of Islam. According to my analysis, the Muslims touched the peak of their glory twice and they also suffered their downfall twice. The first period of rise and downfall was under the leadership of the Arabs, and the second under the leadership of the Turks. In my opinion, the third phase of rise for the Muslims is about to come. As far as Islam itself is concerned, however, it has risen to its highest peak only once, and afterwards it has been a gradual decline. It would be a great mistake to equate the rise of Muslims with the rise of Islam. The ideal period according to Islamic perspective was the age of the Prophet (SAW) and of the Rightly Guided Caliphs (RAA). The flourishing of various branches of knowledge and of science took place while the true Islamic spirit was on the decline. It was the period of Bannu Abbas when the gates of knowledge were opened. Arts and sciences from Greece, India, and China were acquired and were further developed. In my view, the progress of knowledge is a separate process which has nothing to do with Islam.

Actually there are two kinds of knowledge. The first is what I call Acquired Knowledge, which was given to the first human being, Adam (AS), in a potential form. The history of science is the history of the actualization of that potential knowledge. Then there is Revealed Knowledge which used to come from Allah (SWT) to His prophets in the form of wahi. The Acquired Knowledge is based on observation and experimentation: you see something, think about it, experiment, and infer results. Someone saw an apple falling, and inferred that there is a force of gravity that pulls. The progress of scientific knowledge has nothing to do with Islam. This is a continuing process, and it will continue in the future. There was a period in history when an active and energetic people, the Muslims, took part in the development of science. Afterwards, the Europeans rose as an active and energetic nation and they progressed in science. Now the Muslim Ummah can become active once again and continue to make progress. What is really important, however, is faith — faith in Allah (SWT), faith in the Hereafter, faith in prophethood. We call this metaphysical knowledge. Revealed Knowledge deals with metaphysical facts.

  

My perception of victory

I take victory as complete control of a situation. If a group of Allah’s sincere servant is able to achieve such a victory, which includes establishing a society based on true justice by grace of Allah then there should be a hope that such a victory attracts those rebel whose conscience is alive – nothing more nothing less.

A Muslim should always be a caller to Islam – the call that may start in silence with his clean character and best utilization of Divine gifted talent for self as well as for society. If Muslims create attractiveness towards Islam through their excellence in mundane affairs this too is a great contribution but not ‘victory’ in its true and complete sense. How to expect a true victory when the Ummah is divided and the most harmful division is of nationalities where rulers don’t think beyond their national interests?

Let us pray: “de aur dil unko jo na de mujh ko zuban aur”

Shakeel Ashraf

اربابِ اقتدار کا تصورِ مذہب

author:khursheed-nadeem

نواز شریف صاحب نے رمضان کے آخری ایام مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ میں گزارے۔عید کا دن بھی سعودی عرب میں گزرا۔کیسی سعادت ہے جو ایک مسلمان کو نصیب ہوئی۔ہم جیسے عام مسلمان تو رشک ہی کر سکتے ہیں۔
نوازشریف مگر ایک عام مسلمان نہیں۔اُن کے کندھوں پر ان کی ذات کا نہیں ،بیس کروڑ مسلمانوں کا بوجھ ہے۔یہ بوجھ کسی حادثے نے ان پر نہیں لادا۔ انہوں نے اس کی طلب کی اور اس کے لیے دن رات ایک کر دیے۔ان کے لیے سعادت اور عبادت اب ان بیس کروڑ لوگوں سے وابستہ ہے‘ الا یہ کہ معاملہ فرائض کا ہو۔ حج کا فریضہ وہ بارہا ادا کرچکے۔خدا کی رضا ان کے لیے اب پاکستان کے گلی بازاروں میں بکھیر دی گئی ہے۔یہ متاثرین ِ سیلاب کی دعاؤں میں چھپا دی گئی ہے۔یہ وزیرستان سے بے گھر ہو نے والے ان پاکستانیوں کے شب و روز میں ہے جو کھلے آسمان تلے ان کے منتظرہیں۔یہ غربت و افلاس میں ڈوبے ان شہریوں کی اس نگاہ میں ہے جو اسلام آباد کی طرف اٹھتی اور مدد کے لیے فریاد کر تی ہے۔یہ انصاف کی طلب میں بھٹکتے عوام کے پاس ہے جو انہیں ووٹ دیتے اور ایوانِ اقتدارتک پہنچا تے ہیں کہ ان کے ساتھ عدل کا معاملہ ہو گا۔ خدا کی رضا نواز شریف صاحب کی تلاش میں،اس ملک کے گلی بازاروں میں بھٹک رہی ہے۔ حیرت ہے وہ اسے تلاش کرنے عرب جا پہنچے!
اس ملک کے حکمرانوں کا تصور ِ مذہب اصلا ح طلب ہے۔وہ اس باب میں شدید غلط فہمیوں کا شکار ہیں۔مذہب کا بڑا حصہ وہ ہے جو فرد کی سماجی حیثیت کی رعایت سے اسے مخاطب بناتا ہے۔عام پاکستانی مسلمان سے اسلام کا مطالبہ وہ نہیں ہے جو نوازشریف صاحب سے ہے۔زمین آ سمان کا فرق ہے۔عمر ہ نفلی عبادت ہے اورپاکستان میں بسنے والی خلقِ خدا کی خبر گیری ان کا فرض ہے۔عمرہ نہ کر نے پر وہ خدا کے حضورمیں جواب دہ نہیں ہیں لیکن سیلاب زدہ لوگوں کے لیے وہ جواب دہ ہیں۔ فرائض سے غفلت اور نوافل کا اہتمام، بعض اوقات خود ساختہ رسوم، جن کو وہ مذہب سمجھتے ہیں۔ حکمرانوں کے تصورِ مذہب کا بنیادی نقص ہے۔مجھے تو ڈر ہے کہ وہ جسے عبادت کہتے ہیں، کہیں ان کے لیے وبال نہ بن جا ئے۔
خلفائے راشدین کی بات میں نہیں کرتا کہ ان کا اقتدار خدائی فیصلہ تھا۔وہ اللہ کا وعدہ تھا جو پورا ہوا۔زوال کے دور میں بھی جب بادشاہ اہلِ اسلام کے سروں پر مسلط تھے، تب بھی حکمران اور سماج دونوں جانتے تھے کہ اربابِ حکومت سے مذہب کے مطالبات مختلف ہیں۔حکمران اقتدار کے نشے میں خدا فراموشی کا شکار تھے لیکن ان کے نہاں خانہ دل میںیہ تصور چھپا بیٹھا تھا کہ اقتدار ایک آ زمائش ہے اور وہ اس کے لیے خدا کے حضور میں جواب دہ ہیں۔یہ تصور کبھی سر اٹھا تا تو ان کے وجود کا احاطہ کر لیتا۔مسلم سلطنت جب چھوٹے چھوٹے حصوں میں منقسم ہو گئی توایک دولتِ سامانیہ بھی وجود میں آئی۔سامی سلطنت ایران میں ابھری اور کم و بیش ڈیڑھ سو سال تک قائم رہی۔اس کا ایک حکمران نصر بن احمد بن سامان بھی 
تھا۔892ء میں اس کا انتقال ہوا۔نیشا پور اس کی سلطنت کا حصہ بنا تو اس نے ایک جشن کا اہتمام کیا۔وہ تخت نشین ہواتو اس کی فرمائش پر تلاوتِ قرآن سے تقریب کا آ غاز ہوا۔ ایک عالم نے سورہ مومن کی آیات تلاوت کیں۔ عالم نے سورہ کی سولہویں آیت پڑھی:”وہ دن جب کہ سب لوگ بے پردہ ہوں گے،اللہ سے ان کی کوئی بات چھپی نہیں ہو گی۔(اس روز پکار کر پوچھا جائے گا)آج بادشاہت کس کی ہے؟(سارا عالم پکار اٹھے گا)اللہ واحد قہار کی‘‘۔(40:16)بادشاہ نے آیت سنی تو اس پر لرزہ طاری ہو گیا۔ہیبت زدہ ہو کر تخت سے اترا۔تاج کوسرسے اتارا اور سجدے میں گر گیا۔اس کی زبان خدا کی بڑائی کا اعلان کر رہی تھی:”اے میرے رب ،بادشاہی تو تیری ہے، میری کہاں!‘‘کیا معلوم نوازشریف صاحب نے بھی مسجد ِ نبوی میں تراویح پڑھتے یہ آیت سنی ہو۔کیا اُن پر بھی یہ کیفیت طاری ہو ئی؟
ایک واقعہ اور سنیے جو اس سے بھی بعد کی تاریخ کا حصہ ہے۔ عہدِ رسالت سے دوری مزید بڑھ چکی ہے۔عبدالرحمن الناصر سپین کا حکمران ہے۔961ء میں انتقال ہوا۔ملک میں قحط پڑ گیا۔ قاصد کو خطیبِ شہرقاضی منذرکے پاس بھیجا کہ نماز استسقاء پڑھائیں اور بارش کی دعا کریں۔قاضی منذر نے قاصد سے پوچھا کہ بادشاہ نے مجھے دعا کے لیے پیغام بھیجا ہے مگر خود کیا کر رہا ہے؟ قاصد نے کہا:”آج سے زیادہ ہم نے انہیں کبھی خدا سے ڈرنے والا نہیں پا یا۔پریشانی کے عالم میں ہیں اور تنہائی میں پڑے ہیں۔میں نے انہیں اس حال میں دیکھا کہ مٹی کے فرش پر سجدے میں گرے ہیں۔آنکھوں سے آنسو رواں ہیں۔ گناہوں کا اعتراف ہے اور اپنے اللہ سے دعا کر رہے ہیں: اے میرے رب !میری پیشانی آپ کے ہاتھ میں ہے۔کیا آپ میرے گناہوں کی وجہ سے لوگوں کو عذاب دیں گے، آپ تو سب سے زیادہ رحم کر نے والے ہیں‘‘۔قاضی منذر نے یہ سناتو چہرے پراطمینا ن کی لہر دوڑ گئی۔قاصد سے کہا: ”جاؤ اور اپنے ساتھ بارش لیتے جاؤ۔جب زمین پرحکمران اس طرح اظہارِ عجز کرتا اور اپنے رب کو پکارتا ہے تو آسمان پر عالم کے پروردگار کی رحمت جوش میں آ جاتی ہے‘‘۔قاصد واپس پہنچا تو بارش شروع ہو چکی تھی۔(الکامل فی التاریخ)۔
حکومت خدا کی رحمت کو متوجہ کرنے کا غیر معمولی ذریعہ بن سکتی ہے۔نیک حکمران ان لوگوں میں شامل ہیں جن کی دعائیں سب سے زیادہ قبولیت کی صلاحیت رکھتی ہیں۔ رسالت مآبﷺ نے فرمایا کہ قیامت کے دن جب عرشِ الٰہی کے سوا کوئی سایہ نہ ہو گا تو اس تپتی زمین پر سات افراد اس سایے تلے ہوں گے۔ان میں ایک عادل حکمران بھی ہے۔حکمران کو اسی وقت یہ منصب حاصل ہو تا ہے جب وہ جانتا ہے کہ اس سے مذہب کے مطالبات کیا ہیں؟وہ خدا کی رضا کا طلب گار ہوتا ہے مگراسے عوام کے مسائل میں تلاش کر تا ہے۔وہ جانتا ہے کہ اس کے لیے عبادت کا تصور وہ نہیں ہے جو ایک عام مسلمان کے لیے ہے۔اس کی عبادت عوام کی خدمت ہے۔مکرر عرض ہے کہ فرائض کا معاملہ الگ ہے کہ وہ ہر حال میں لازم ہیں۔
آصف زرداری صاحب نے نو کروڑاجمیر شریف کی نذر کر دیے۔ان کا خیال بھی یہی تھا کہ انہوں نے اپنا مذہبی فریضہ ادا کر دیا۔ہمارا حکمران طبقہ مذہب کے باب میں اسی طرح کی غلط فہمیوں میں مبتلا رہتا ہے۔کبھی کسی پیرسے لاٹھیاں کھا لیں۔ کبھی کسی مزار پر چادر چڑھادی۔کبھی رمضان کے آ خری ایام حرمین میں گزار کر، یہ فرض کر لیا کہ مذہبی ذمہ داریاں ادا ہو گئیں۔یہ بات بھی اہم ہے کہ یہ عمرے عوام کے پیسے سے ہوتے ہیں یا ذاتی پیسے سے۔اگر پیسہ عوام کا ہے تو پھر یہ عبادت سے زیادہ جرم ہے۔ 
علما کا کام ہے کہ وہ حکمرانوں کو انذارکریں۔ انہیں بتائیں کہ ان سے مذہب کے مطالبات وہ نہیں ہیں جو ایک عام مسلمان سے ہیں۔یہ کام قاضی منذر جیسے لوگ کرتے تھے۔کبھی لکھوں گا کہ یہ قاضی منذر کون تھے،آج تو مجھے صرف اہلِ اقتدار کے تصور ِ مذہب تک محدود رہنا ہے۔نوازشریف صاحب عمرے ضرور کریں لیکن انہیں یاد رکھنا چاہیے کہ خدا کی رضا، اس ملک کی گلی بازاروں میں انہیں تلاش کر رہی ہے۔ 

http://dunya.com.pk/index.php/author/khursheed-nadeem/2015-07-27/12072/14437000#tab2