بے دم ہوے بیمار دوا کیوں نہیں دیتے

فیض احمد فیض

 1911-1984
٣١ دسمبر ١٩٥٨ کو لاہور جیل سے لکھی گئی

————————–

بے دم ہوے بیمار دوا کیوں نہیں دیتے

تم اچھے مسیحا ہو شفا کیوں نہیں دیتے

درد شب ہجراں کی جزا کیوں نہیں دیتے

خون دل وحشی کا صلا کیوں نہیں دیتے

مٹ جائے گی مخلوق تو انصاف کروگے

منصف ہو تو اب حشر اٹھا کیوں نہیں دیتے

ہاں نکتہ ورو لاؤ لب و دل کی گواہی

ہاں نغمہ گرو ساز صدا کیوں نہیں دیتے

پیمان جنوں ہاتھوں کو شرمائے گا کب تک

دل والو گریباں کا پتا کیوں نہیں دیتے

بربادئ دل جبر نہیں فیضؔ کسی کا

وہ دشمن جاں ہے تو بھلا کیوں نہیں دیتے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s