شہرِ گل کے خس و خاشاک سے خوف آتا ہے ــــــ افتخار عارف

شہرِ گل کے خس و خاشاک سے خوف آتا ہے
جس کا وارث ہوں اُسی خاک سے خوف آتا ہے

 

شکل بننے نہیں پاتی کہ بگڑ جا تی ہے
نئی مٹی کو ابھی چاک سے خوف آتا ہے

 

وقت نے ایسے گھمائے افق آفاق کہ بس
محورِ گردشِ سفّاک سے خوف آتا ہے

 

یہی لہجہ تھا کہ معیار سخن ٹھہرا تھا
اب اسی لہجۂ بے باک سے خوف آتا ہے

 

آگ جب آگ سے ملتی ہے تو لو دیتی ہے
خاک کو خاک کی پو شاک سے خوف آتا ہے

 

قامتِ جاں کو خوش آیا تھا کبھی خلعتِ عشق
اب اسی جامۂ صد چاک سے خوف آتا ہے

 

کبھی افلاک سے نالوں کے جواب آتے تھے
ان دنوں عالمِ افلاک سے خوف آتا ہے

 

رحمتِ سیدِؐ لولاک پہ کامل ایمان
امتِ سیدِؐ لولاک سے خوف آتا ہے
Advertisements

One thought on “شہرِ گل کے خس و خاشاک سے خوف آتا ہے ــــــ افتخار عارف

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s