کچھ تجھ کو خبر ہے ہم کیا کیا، اے گردشِ دوراں بھول گئے

Advertisements