٭ قرآن اور کلام اقبال٭

 آج کا مادہ پرست ماحول؛جس کی وجہ سے نسلیں تباہ ہورہی ہیں، ان کے قلوب ایمان کی حرارت،حبِّ صادق کی تپش اور یقین کے سوز سے خالی ہیں،اور یہ عالمِ نو ایک ایسی متحرّک شکل میں نظر آرہا ہے؛جس میں نہ زندگی ہے اور نہ کوئی روح، نہ شعور و وجدان ہے، نہ حقیقی مسرت وغم کا احساس؛بل کہ زندگی روح سے تہی دست، شعور و وجدان جنسی موسیقی سے پراگندہ نظر آتے ہیں، خواہشاتِ نفسانی کا حصول مسرّت و غم کا معیار بن چکا ہے؛ حتیٰ کہ نسلِ جدید مادّہ و معدہ کو اپنا قبلہ بناکر اسلامی افکار و خیالات سے دوری ہی نہیں؛ بل کہ ان کو جدید ترقی میں رکاوٹ تصوّر کرنے لگی ہے؛ ہر آنے والا اگلا لمحہ گذشتہ سے زیادہ سیاہ اور مہیب شکل میں ظاہر ہورہا ہے۔ ان خوفناک تبدیلوں کو علّامہ اقبال نے بہت پہلے اپنی دور رس نگاہوں سے تاڑ لیا تھا، اور اس سے بچاؤ کے لیے تیّاری شروع کردی تھی؛ چنان چہ انہوں نے اپنے کلام سے مسلمانوں کے شعور واحساس،قلب وجدان میں ایمانی حرکت وحرارت سوزوگداز،درد وٹیس پیدا کرنےکی کوشش شروع کردی؛ تاکہ ان میں ایما نی حرکت وحرارت شعلہ جوالہ بن کر بھڑک اٹھے جس کی گرمی سے مادیّت کی زنجیریں پگھل جائیں، فاسد معاشرہ اور باطل قدروں کےڈھیر،جل کر فنا  ہو جائیں۔

                                                                                                                  (نقوشِ اقبال/50 :از علی میاں ندوی)

                       اقبال مختلف پیرایے میں امّتِ مسلمہ کو صحیح راہ دکھانےکی کوشش کرتے ہوئےکبھی تاریخ کےفطری حوالےسے، تو کبھی فلسفے کےعقلی دلائل سے،کبھی سیرت کے معجزہ اثرواقعات سے،تو کبھی قرآن کی پُرسوز آیات سےجادۂ مستقیم کی طرف رہ نمائی کرتے رہے۔۔اوران تمام میں سب سےزیادہ جس چیز سےاقبال نےاستفادہ کیا ہے اورجس کواقبال نےاپنا سب سےاہم ماخذ بنا یا ہے ،وہ قرآن ہے۔

              اس لئے کہ قرآن ہی ایسی زندہ جاوید کتاب ہے جوانسان کوعلم ِلدنّی اورابدی سعادت سےبہرہ ورکرتی ہے۔ وہ ایک ایسی شاہِ کلید ہے، کہ حیاتِ انسانی کےشعبوں میں جس شعبہ پر بھی اسے لگائے، فوراً کھل جائے، وہ زندگی کاایک واضح دستور اور ظلمتوںمیں روشنی کا مینا رہ ہے(نقوشِ اقبال/51)

قَدْ جَاءَکُمْ مِنَ اللّٰہِ نُوْرٌ وَ کِتٰبٌ مُبِیْنٌ﴿ډ﴾  تمہارے پاس اللّٰہ کی طرف سے ایک روشن چیز آئی ہے اور ایک کتابِ واضح

 یَھْدیْ بِہِ اللّٰہُ مَنِ اتَّبَعَ رِضْوَانَہ سُبُلَ السَّلَٰمِ    کہ اس  کے ذریعہ سے اللّٰہ تعالٰے ایسے شخصوں کو جو رضائے حق کے وَ یُخْرِجُھُمْ مِنَ الظُّلُمٰتِ إلٰی النُّوْرِ بِاِذْنِہ    طالب ہوں سلامتی کی راہیں بتاتے ہیں اور ان کو اپنی توفیق سے تاریکیوں وَ یَھْدَیْھَمْ اِلٰی صِرَاطٍ مُسْتَقِیْمٍ                          سے نکال کر نور کی طرف لے آتے ہیں ور ان کو راہِ راست پر قائم رکھتے ہیں۔

                                                                                                    (،المائدہ:15-16)

            قرآن ِعظیم  جتنا اقبال کی زندگی پر اثر انداز ہوا ،اتنا وہ کسی شخصیت سے متأثر ہوئے اور نہ ہی کسی کتاب نےاْن پرایسا اثر ڈالا، علاّمہ نے اپنی پوری زندگی قرآنِ مجید میں غوروفکر اور تدبّر و  تفکّر  کرتے گزاری، وہ قرآن مجید پڑھتے،قرآن سوچتے اورقرآن بولتے، قرآن  مجید ہی ان کی وہ محبوب کتاب تھی جس سےان کی اخاّ ذ طبیعت نئے نئے اسرار و رموز اورعلوم کاانکشاف کرتی، اس سےانھیں نیا یقین،نئی روشنی اورنئی قوّت وتوانائی حاصل ہو تی،(نقوشِ اقبال/51)

              جوں جوں ان کا مطالعۂ قرآن بڑھتا گیا،ان کےفکر میں  بلندی اور ایمان میں زیادتی ہوتی گئی اور وہ  معانئ قرآن کو  اپنے  اشعار کے قالب میں ڈھالتے چلے گئے،  اکثر تو وہ صرف قرآن کےمعانی ہی  بیان کرتے؛مگربہت سے ایسے مواقع بھی آئے جب ایمانی حرارت  کے تقاضے اور قرآنی الفاظ کی جا معیت کی وجہ سے قرآنی الفاظ معانی کے پردے میں مستور ہونے کےبجائے،بے ساختہ لبِ اقبال پر مچل اٹھتے اور پھر کلام کی تاثیر میں مزید دو بالگی،سہ بالگی پیدا ہوجاتی، سوز و گداز،درد و تپش دیکھنے لائق ہوتا مثلاً:

٭

                                                 گل  و  گل زار  ترے  خلد  کی  تصويريں ہیں

                                                 يہ سبھی سورۂ”والشمس” کی تفسیریں ہیں

                “بانگِ درا” میں اگربہ نظرِ غائر “انسان اور بزم قدرت” کے عنوان سے لکھی ہوئی نظم کامطالعہ کیا جائے  تو علاّمہ اقبال نے نہ صرف  سورہ “والشمس” کا لفظ استعمال کیا ہے؛بل کہ پوری نظم کو پڑھ کر یوں محسوس  ہوتا ہے  کہ علاّمہ نےسورہ “والشمس” کے مکمل معانی و مقاصد کو پیش نظررکھتے ہوئے یہ نظم  کہی ہے، کہ انسان اپنے آپ کو سنوارے ؛ورنہ یہ دنیا کی چمک دمک ،یہ آسمان کی  بلندی، زمین کی وسعت  اور لیل و نہار کی  گردش ساری کی ساری چیزوں کا  اسیر ہونا ؛بل کہ ان ساری چیزوں کو  اسیر کر لینا  بھی بے کارہے، یعنی  اگر انسان اپنی حقیقت  اور مقصد سے بے خبر رہتا  ہے تو سیہ بختی اور سیہ روزی اس کا مقّدر  بن جاتی ہے۔

فَدَمدَمَ عَلَیْھِمْ رَبُّھُمْ بِذَنْبِھِمْ فَسَوّٰھَا*     تو ان كے رب نے ان كےگناه كے سبب ان پر ہلاکت نازل فرمائی

                                                                    پھر اس (ہلاکت)کو (تمام قوم کے لیے) عام فرمایا۔

                                                                                                                               (الشمس:14)

                            تو اگر اپنی حقیقت سےخبردار رہے

                         نہ سیہ روز رہے  پھر نہ سیہ کار   رہے

٭

             اسی طرح بانگ درا میں”پیامِ صبح”  کے نام سے لکھی نظم میں اندھیرے اور تاریکی کو دور کرنے والی روشنی کو  سورہ “النّور ”    کا نام دے کر کچھ اس طرح سورج کی کرنوں کو بیا ن کیاہے ۔

                                                               طلسم ظلمتِ شب سورۂ”و النّور” سے توڑا

                            اندھیرے  میں  اڑایا  تاجِ زر شمعِ  شبستاں   کا

              نظم سے قطعِ نظر اگر صرف اس شعر کو لیا جا ئے تو سورہ “النّور” کا مکمل  پسِ منظر اور شانِ نزول اس سے سمجھا جا سکتا ہے کہ مسلما نوں کے دلوں پرواقعۂ اِفک کی وجہ سے  رنج و غم کی تاریکی  چھا گئی تھی جسے  اللّٰہ نے سورہ “النّور”  نازل فرماکر کافور کردیا۔

٭

                                                             قصۂ   دار و  رسن  بازئ  طفلا نۂ  دل

                                                            التجائے  ”أرِنی“ سرخئ  افسا نۂ  دل

دل / بانگ درا کے زیر عنوان  بڑے ہی اچھوتے  انداز میں اقبال نے دل کاتعارف کرایا ہے، اس تعارف کے دوران انہوں نے حضرت   ابراہیم    علیہ السلام   کی خو ہش

 ”رب أرنی  کیف  تحی الموتی“     (اے میرے پروردگار! مجھ کو دکھلا دیلیے کہ آپ مردوں کو کس کیفیت سے

                                                           زندہ کریں گے؟ :البقرہ/26)

                    اور حضرت موسی علیہ السلام کی تمنا ”أرنی“ (الاعراف/143) جملوں کے ذریعے سے بھی دل کےتعارف میں چار چاند لگا نے کی کوشش کی ہے اورکہا ہے کہ اسی”أرنی“ کی آرزو کی طاقت  کی وجہ سے حضرت موسی﷣ کےلے فرعون کے ظلم و ستم بازئ  طفلک کی طرح ہو گئے تھے۔

٭                           جوابِ شکوہ کے تحت  امتِ مسلمہ کی کمزوریوں کے اسباب بیان  کرتے ہوئےعلّا مہ  نے ایک  بہت  بڑی کمزوری  “قوّتِ عشقِ محمّد ﷺ ” کا نہ ہو نا،  بیان  کیا ہے اور مسلسل  کئی مصر عوں  میں  آپ ﷺ کی تعریف

لَوْلَاکَ لَمَا خَلَقْتُ الْاَ فْلَاک                               اگر تم نہ ہوتے تو میں کائنات کو پیدا نہ کرتا۔

 اور

 لولا محمّد ما خلقتک                 اگر محمّد(﷑)نہ ہوتے تو اے آدم (﷣)میں تجھے پیدا نہ کرتا۔

(البیہقی:5/489))

کی شرح کرتے ہوئے آخر میں قرآنِ کریم کی جامع توصیفی آیت

”وَرَفَعْنَا لَکَ ذِکْرَکَ“                             اور ہم نے آپ کی خاطر آپ کا آوازہ بلند کیا۔

                                                                                                           (الانشراح/4)

کو خوبصورت انداز میں پیش کیا ہے۔

                                          چشمِ  اقوام  یہ   نظّارہ    ابد   تک  دیکھے

                                     رفعتِ شانِ ”رَفَعْنَا لَکَ ذِکْرَک“ دیکھے

اور عشق و محبت اورجہد و عمل پر ابھارتے ہوئے

” قُلْ اِنْ كُنْتُم تُحِبُّوْنَ اللّٰهَ فَاتَّبِعُوْنِيْ يُحْبِبْكُمُ اللّٰه“       آپ فرما دیجیے کہ اگر تم خدا تعالٰے سے محبّت رکھتے ہو تو تم

                                                                                         لوگ میرا اتباع کرو خدا تعالیے تم سے محبّت کرنے لگیں گے۔

                                                                                                                                              (آلِ عمران/31)

کی طرف اشارہ کرتے ہوئے  مشہور شعر

؎

                                       کی ”محمّدؑ“سے وفا تو نے  تو ہم تیرے ہیں

                               یہ  جہاں چیز ہے کیا لوح و قلم تیر ے  ہیں

سے جوابِ شکوہ کو مکمل کیا ہے۔

٭

                          آ ! بتاؤں تجھ  کو رمزِآیۂ”اِنَّ ا لْمُلُوْک“

                              سلطنت اقوامِ غالب کی ہے اک  جادو گری

               سلطنت / بانگِ درا  میں اقبال نے سلطنت ،غلامی، آزادی، محکومی، اور  مغرب کا خود ساختہ “جمہوری نظام” پر تفصیل سےروشنی ڈالتے ہوئے “ملکۂ سبا “کے مبنی برحقیقت نظریہ کی طرف اشارہ کیا ہے  ،جو قرآن میں

”اِنَّ الْمُلُوْکَ اِذَادَخَلُوْا قَرْيَةً اَفْسَدُوْھَا“               والیانِ ملک (کاقاعدہ ہے کہ)جب کسی بستی میں (مخالفانہ طور پر)داخل ہوتے ہیں  تو اس کو تہ و بالا کردیتے ہیں۔ (النمل:34)

کے الفاظ میں آیا ہے۔

                        علّا مہ نے مغرب کے مسلط کردہ جمہوری نظام کو ایک طرح کی غلامی  اور محکو می قرار دیتے ہوئےمشہور شعر

                                اس سراب ِرنگ و بو  کوگلستاں سمجھا ہے تو

                                آہ اےناداں قفس کو  آشیاں سمجھا ہے تو

کے ذریعےجمہو ریت کو ایک حسین و خوب  صورت  قفس بتایا ہے ، جس میں انسان صرف خیال و خواب کے درمیاں ہوتا ہے وہ اپنے کوآزاد سمجھتا ہے، لیکن  اصلاًوہ غلام اور محکوم ہی ہوتا ہے؛مگر غلامی و محکومی کااحساس ختم ہو جاتاہے،جس کے نتیجے میں وہ جدّ و جہد اور تگ و دو بھی نہیں کرتا ہے اور ہمیشہ کی غلا می اس کا  مقدّر بن جاتی ہے۔

٭

             دنیائے اسلا م/بانگِ درا میں شا عر مو صو ف نے مسلما نوں میں در آنے والی کمزوریوں اور ان کے اثرات کی طرف اشارہ کیا ہے کہ کس طرح وہ مذہب بیزار اور مغرب پر ستار ہو رہے ہیں نتیجتاً وہ طرح طرح کے اختلافات کا شکار ہو چکے ہیں ، کہیں نسلی تعصّب ہے تو کہیں ملکی امتیازات۔   اسی نظم میں علّا مہ کا وہ مشہور شعرہے جو اتحاد  و اتفاق پر بات کرتے ہو عموماً زبانوںپر آجاتا ہے۔

                                    ایک  ہوں  مسلم  حرم  کی  پاسبانی   کے  لیے

                                    ”نیل“ کے ساحل سے لے کر تا بہ خاک ” کا شغر“

آگے چل کر شاعر نے مسلمانوں کو پیچھے لوٹنے کے لیےکہا ہے اور اسلاف کی روش اختیار کرنے پر زور دیتے ہوئے بتایا ہے کہ جس طرح اسلاف کےساتھ الّلہ کی مدد ہوتی ہے،  اگر آج کے مسلمان   کے پاس بھی اسلاف جیسا قَلب  و جگر اور جذبہ ہوتو الّلہ کی وہ اسلاف والی مدد  ان کے ساتھ بھی ہو سکتی ہے۔

                                                   مسلم   استی  سینہ   را    از  آرزو  آباد  دار

                                                ہر زماں پیش نظر ”لَايُخْلِفُ الْمِيْعَاد“دار

(یقیناً اللّٰہ تعالٰے وعدہ خلاف نہیں کرتے۔:الرعد/31)

٭

                                    اے مسلماں ہر گھڑی پیشِ نظر

                                    آیۂ لا یخلف المیعاد رکھ

 (الر عد/31)

              غزلیات / بانگ درامیں علّامہ نے مسلمانوں کو اسباب کےمایا جال کو توڑ کرعقل کی غلامی سےآزاد ہوکر عشق الہی کو  اپنانے کی دعوت  دی ہےاور کہا ہے کہ آج بھی عشق ِ الہی کی بنیادپر الّلہ کے وہی وعدے ہیں ،جو اسلاف کے ساتھ رہے ہیں، اور الّلہ ہر گز بھی وعدہ خلافی نہیں کرتے ہیں، صرف  ضرورت ہے کہ آدمی عشق میں مقام پیدا  کرے جو اسے عقل کی  غلامی  سے آزاد کرکے اسباب  کے یقین سے چھٹکارا دلا دے۔

            ٭

                                               یہ  لسان  العصر  کا پیغام  ہے

                                                “إنَّ وَعْدَاللهِ حَق” یاد رکھ

               مذکورہ شعر بھی گزشتہ نظم کا ہی آخری شعر ہے جس   میں “لا يخلف الميعاد” کو مزید مؤکد کیا گیا ہے کہ بلا شبہ الّلہ کا وعدہ حق ہے۔(لقمٰن/33)

٭

                        “بانگ درا ” میں ظریفانہ  کے تحت سرمایہ دارانہ نظام سے پیدا شدہ کش مکش کا تذکرہ کرتےہوئے   دو  آیتوں کا اقتباس لے کرنظم میں حسن و دو بالگی پیدا کی ہےکہ جس طرح ”یاجوج“اور ”ماجوج“ کے دنیا میں ظاہر ہونے سے افرا تفری کا ماحول ہوگا، اسی طرح غیر اسلامی رجحانات کی وجہ سے آج کے معاشی نظام میں افرا تفری پھیلی ہوئی ہے۔

                                                 حکمت  و  تدبیر سے  یہ فتنۂ  آشوب  خیز

                                                ٹل نہیں سکتا “وَقَدْکُنْتُمْ بِهٖ تَسْتَعْجِلُوْن”

(هذاالذي كنتم به تستعجلون:یہی وہ چیز ہے جس کی تم لوگ جلدی مچا رہے تھے:الذٰریٰت/14)

٭

کھل گئے یا جو ج   اور  ماجوج کے لشکر تمام

چشمِ مسلم دیکھ  کے تفسیر  ِحرفِ “یَنْسِلُوْن”

(جب یاجوج و ماجوج کھول دیے جائیں گے اور وہ (غایتِ کثرت کی وجہ سے) ہر بلندی سے (جیسے پہاڑ اور ٹیلہ) نکلتے (معلوم) ہوں گے۔:الا نبیاء/96)

 کھائے کیوں مزدور کی محنت کا پھل سرمایہ دار

            حکمِ حق ہے” لَیْسَ لِلْإِنْسَانِ إلَّامَا سَعٰی”

 (انسان کو صرف اپنی ہی کمائی ملے گی :النجم/39)

             مذکور شعر میں اقبال نےبڑے نرالے انداز میں قرآن کی ایک آیت سے اقتباس  لے کر سرمایہ دارانہ نظامِ معیشت اور اشتراکیت کا مذاق اڑایا ہے ۔

٭

                        علّا مہ اقبال نے غزلیات /بالِ جبرئیل  میں توحید کی سر مستی کو بیان کر تے ہوے  کہا ہےکہ جب انسان” لا الہ الاالّلہ” کا  جام پی لیتا ہے تو پھر وہ جھوٹی “انا” سےآزاد ہو جاتا ہے اور صرف خداکا ہوکر رہ جاتا ہے

                                    مٹا دیا مرے ساقی نے عالمِ من و  تو

                                    پلا کے مجھ کو مئے”لَااِلٰهَ اِلَّاھُو”

(اس کے سوا کوئی اور معبود (بننے کے لائق) نہیں۔:الحشر/22)

٭

                                    یہ   کائنات   ابھی   نا   تمام     ہے   شاید

                                    کہ آرہی  ہے دمادم صدائے”کن فیکوں”

(اللّٰہ تعالٰی جب کسی کام کو پورا کرنا چاہتے ہیں تو بس ااس کام کی نسبت (اتنا) فرما دیتے ہیں کہ ہو جا پس وہ (اسی طرح) ہو جاتا ہے۔:بقرہ/117)

             بال جبرئیل میں اقبال نے یقینِ محکم اور عملِ پیہم پر ابھارتے ہوئے یہ سبق  دیا ہے کہ آسمان اپنی تمام تر بلندیوں کے باوجود بھی مسلمانوں کے زیرِنگیں آسکتا ہے۔ مسلما نوں کی خودی جب تک زندہ ہے ان کے لیے ترقی و بلندی کی نئی نئی کائنات وجود میں آتی رہےگی،  یعنی اگر مسلمانوں میں یقینِ محکم ، عملِ پیہم اور جہدِ مسلسل کی قوّت ہو تو الّٰلہ کا امر “کُنْ” ان کی رضا کے لیے جاری و ساری ہے۔

                                                کی محمّد سے وفا تو  نے تو ہم تیرے ہیں

                                                یہ جہاں چیز ہےکیا  لوح و قلم تیرے ہیں

٭

                        غزلیات /بانگ درا میں علّا مہ نے مسلمانوں  کو جہد و مجاہدہ کا درس  دیتے ہوے کہا ہے کہ جس طرح  حضر ت موسٰی     کے ساتھ نصرتِ خد اوندی  شاملِ حال رہی ہے ، اسی طرح مسلمانوں کی بھی مدد ہو سکتی ہے ، مسلمانوں کا خوف و اندیشہ ختم ہو سکتا ہے اور انھیں بھی فرعون پر فتح  حا صل ہو سکتی ہے، لیکن اس کے لیے یہ ضروری ہے کہ مسلمانوں  میں حضرت موسٰی      ﷣ والی معرکہ آزمائی  آجائے اور اﷲ کے حکموں  پر سب کچھ لگا دینے کا جذبہ  پیدا ہو جائے ۔

؎

                                                  مثلِ    کلیم ؑ   ہو    اگر    معرکہ    آزما    کوئی

                                                اب بھی درخت  طور سے آتی ہےبانگِ”لا تخف”

(ڈریے نہیں!:القصص/31)

٭

                                                عطا  اسلاف  کا  جذبِ  دروں  کر

                                                 شریکِ زمرہ”لا یحز نوں” کر

 (یونس/62 )

                 ”بالِ جبرئیل “میں  رباعیات کے تحت ایک دعائیہ رباعی میں  اقبال نے اسلاف  جیسا کردار  و عمل مانگا ہے اور اپنےآپ کوارباب جنوں،  جن کے بارے میں قرآن میں

  ”لاخو ف عليهم و لا ھم یحزنون “          اللّٰہ کے دوستوں پر نہ کوئی اندیشہ (ناک واقہ پڑتے والا) ہے اور نہ وہ (کسی

                                                                        مطلوب کے فوت ہونے پر)مغموم ہوتے ہیں۔ (یونس/62)

آیا ہے ، کی بزم کا ایک فرد بنانے کے درخواست کی ہے۔

٭

                          طارق کی دعا / بالِ جبرئیل  میں  شاعر نے بڑے ہی اچھے پرایے میں  مسلمانوں، خصوصاً عربوں کی جرأت و ہمت کی داد دی ہے اوران کی ہیبت و عظمت اور عزم و حوصلہ  کو بیان کیا ہے اور باطل کے اندھیروں کے مقابلے میں مسلمانوں کو روشنی کی ایسی تلوار  بننے کی آرزو کی ہے، جو بجلی کی طرح یک لخت اندھیروں  کا خاتمہ کردے۔

                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                            دِل مرد مومن میں پھر زندہ کردے

                                                                   وہ بجلی کہ تھی نعرۂ”لَا تَذَرْ“ میں

(اے میرے پروردگاار!  کافروں میں سے زمین پر ایک باشندہ بھی مت چھوڑ!:نوح/26 )

٭

                                                  جس  کی  نو  میدی  سے  ہو  سو زِ درونِ  کائنات

                                                اس کے حق میں” تقنطوا “اچھاہے یا ”لا تقطوا“

مذکورہ شعر بالِ جبر ئیل  میں ” جبرئیل و ابلیس“ کے زیر عنوان  لکھا گیاہے ، جس میں اقبالؒ نے جبر  ئیل      ﷣اور ابلیس کاایک مکالمہ بیان کیاہےکہ جبرئیل  ﷣نے ابلیس سے کہا کہ کیا ایسا نہیں ہو سکتا کہ تو بھی ناامیدی کا دامن چھور کر پھر سے جنّت میں آکر رہنے لگے  اس لیے کہ اﷲ نے

  ”لا تقنطوا من رحمۃ اﷲ“                                      تم خدا کی رحمت سے نا امید مت ہو!

                                                                                     (الزمر/53)

 کا اعلان  کر رکھا ہے ۔

                        اس کے جواب میں ابلیس  نےایک عجیب بات کہی ہے کہ دیکھ جبرئیل میرا دنیامیں اس طرح آوارہ و پریشان رہنا ہی دنیا کے لیے  بہتر ہے ورنہ تو دنیا  بے رنگ و بو ہو جائے گی، میری وجہ سے ہی اس دنیا میں سوز و سا ز ، درد و داغ اور جستجو و آرزو کےمناظر ہیں، ورنہ تو یہ دنیا با لکل  خا موشی و بےرنگ ہو جائے گا اس لیے”لا تقنطو من رحمتہ اﷲ“  کا اعلان اپنی جگہ مگر میری نا امیدی کی وجہ سے ہی دنیاکی چمک دمک ہے اس لیے جبرئیل  تو ان  بکھیڑوں میں نہ پڑ اور  جاکراپنا  کام اﷲ ھو کرتا رہ۔

٭

                        اسلام اور مسلمانوں کے نام / ضربِ کلیم کے تحت علّا مہ نے پوری ایک نظم”لا الہ الّا اﷲ“ کے عنوان سے لکھی  ہے جس میں انھوں نے دنیا کی تمام  حسنی و معنوی چیزوں کی نفی کرتے ہوے بتلایا ہے کہ اصل ذات اﷲ کی ہے ، چیزوں  کے اندر کوئی خاصیت اور صلاحیت نہیں ، بل کہ تمام تصرفات کا مالک صرف اﷲہے۔

                                                کیا ہے تونے متاعِ غرورکا سودا

                                                فریبِ سودو زیاں لا الٰہ الّااﷲ

(محمّد:19)

٭

                                                تو معنئ والنجم نہ سمجھا  تو عجب کیا

                                                ہے تیر ا مدو جز ر ابھی چاند کا محتاج

(النجم/1 )

                ”ضربِ کلیم“ میں معراج عنوان سے ایک نظم ہے جس میں اقبال نے بڑی قوّت کے ساتھ یہ سمجھانے کی کو شش کی ہے کہ انسان کے اندر اگر شوق و جذبہ ہو، اس کاتعلق اﷲ کے ساتھ مضبوط ہو اور مقصدبھی صالح ہوتو بڑی بلندیوں کو سر کر نا اس کے لیے کوئی مشکل نہیں ہے۔

٭

                                               میں نے اے میر ِسپہ تیری سپہ دیکھی ہے

                                                ”قلھواﷲ“کی شمسیر سےخالی ہیں نیام

(الا خلاص/1 )

           توحید/ضربِ کلیم میں وحدتِ فکر و عمل اور اتحادواجتماعیت پر آمادہ کرنےکےلیے اقبال نے سورۂ”قل ھواﷲأحد“ کے ذریعہ سے امت کو مکمل اجتماعیت اور اتحاد کی دعوت ، غیر قومو ں  سے بے نیازی  اور دیگر اقوام کے مقابلے میں مسلمانوں کی حقیقی بلندی و برتری کا سبق دیا ہے۔

٭                   لاہور و کراچی / ضربِ کلیم میں مسلمانوںکو جہاد و قربانی کی طرف متوجہ کیا ہے اور اس عمل پر افسوس کا اظہار کیا ہے کہ خانۂ کعبہ سے زیادہ مقدّس و مبارک مسلمانوں کا اگر کوئی غیر قتل کردے تو ہم ان کے خون کا معاوضہ لے کر رہ جاتے ہیں  اور پھر اس کمزوری و بزدلی کی وجہ کی طرف اشارہ کیا ہے کہ اصل وجہ یہ ہے کہ آج مسلمانوں  نے اﷲکے علاوہ  سیاسی ، معاشی،  سماجی، مالی اورطرح طرح کے دیگر خدا  بھی تراس لیے ہیں ، اسی وجہ سے موت کاخوف ، جہد و عمل کی کمزوری اور  فقدانِ غیرت سے دو چار ہورہے ہیں۔

                                                آہ اے مردِ مسلماں تجھے کیا یاد نہیں

                                                حرف ”لَاتَدْ عُ مَعَ اﷲِإلٰهاً آخَر“

(تم خدا کے ساتھ کسی اور معبود کی عبادت مت کرنا۔:الشعراء/213 )

٭                                               فروغِ مغر بیاں خیرہ  کر رہا ہے تجھے

                                                تری نظر کا نگہبان ہو صاحب”مَا زَاغ“

(النجم/17 )

            مذکورہ اشعار  ”ضربِ کلیم “ میں  غزل کے عنوان سے ہے، جس میں بڑے اچھے انداز میں  امت مسلمہ کو مغرب نوازی سے باز رکھنے کی کوشش کی ہے اور  یہ بتلا دیا ہے کہ مغر ب  کی چمک دمک صرف ظاہری اور وقتی ہے، اصلی اور دائمی چمک تو  محمّد عربیﷺ کے دین  ہے، یہ تو بڑے افسوس کی بات ہے کہ جس نبی کی اﷲ نے

 ”مَازَاغَ البَصَرْ وَ مَا طَغٰی“                    (نبی ﷑ کی ) نگاہ نہ تو ہٹی اور نہ بڑھی۔:)

کے ذریعے تعریف کی ہے، اس کی امّت ان ظاہری چمک میں کھوکر اصلی چمک سے محرو م  ہو جائے۔

٭

                        ”ضربِ کلیم“ میں  خاقانی کے عنوان سے خا قانی شخصیت اور ان کے کلام کے نیان و معانی کی طرف اشارہ کرتے ہوے اقبال نے  قرآن  کامشہور جملہ ” لن ترا نی“(تم مجھ کو ہرگز نہیں دیکھ سکتے) کو بطورِ اقتباس استعمال کیا ہے کہ خا قا نی کو الفاظ و معانی کی تلاش  کے لیے  کو ئی زیادہ محنت کرنی پڑتی ، وہ جب جسے  چاہتا ہے استعمال کر تا ہے، وہ غلاموں کی طرح چپ چاپ خا قانی کے سامنے آجاتے ہیں ۔

                                                خاموش   ہے   عالمِ   معانی

                                                کہتا نہیں  حرفِ ”لن  ترانی“

(الا اعراف/143 )

٭                                             جو حرفِ”قل العفو“ میں پوشیدہ ہے اب تک

                                               اس دور میں شاید وہ حقیقت ہو نمودار

 (آپ کہ دیجیے کہ جتنا آسان ہو خرچ کرو!:البقرہ/219)

                ”ضربِ کلیم“میں اشتراکیت  کے تحت معاشی  نظام پر بحث کرتے ہوے  علّامہ نے سب سے بہتر معاشی نظام کا ایک ضابطہ قرآن پاک سے پیش کیا ہے۔

٭

               محراب گل کے افکار/ضربِ کلیم کی ایک نظم میں اقبال نے توحید کو مضبوطی سے تھامنے کو کہا ہے اور یہ بتلایا ہے کہ اگر مسلمان اللّٰہ وحدہٗ لاشریک لہٗ کو دل میں اتار لے اور اسی کا ہو کر رہ جائے تو جس طرح اللّٰہ کی ذات یگانۂ و یکتا ہے، اسی طرح مسلمان بھی زمانے بھر میں یگانۂ و یکتا ہو جائے گا۔

                                      ؎

     رہے  گا  تو  ہی  جہاں  میں  یگانۂ  و  یکتا

اتر گیا جوترے دل میں لا شریک لہ

(اس کا کوئی شریک نہیں۔الانعام/163)

 ٭

                                         افغان   باقی  ،  کہسار   باقی

                           الحکم للّٰہ، الملک للّٰہ

(ان الحکم الّا للّٰہ:اللّٰہ ہی کا فیصلہ نافذ ہوتا ہے۔الانعام/57)

(الملک یومئذٍ للّٰہ: بادشاہت اللّٰہ ہی کی ہے۔الحج:56)

          محراب گل کے افکار کے تحت اقبال نے اللّٰہ کی عظمت و بڑائی کو بتایا ہے کہ اس دنیا میں وہی ہوتا ہے جو اللّٰہ چاہتا ہے  اسی کا حکم چلتا ہے کسی کے لیے کوئی بادشاہت نہیں؛ بل کہ اصل بادشاہت اللّٰہ ہی کی ہے اس لیے اللّٰہ جس کو ہلاک کرنا چاہے، اسے کوئی بچا نہیں سکتا،اور جسے اللّٰہ باقی رکھنا چاہے اس کا دنیا کی سا ری طاقت مل کر بھی کچھ نہیں بگاڑ سکتی۔

http://ir-centre.blogspot.ae/2014/03/blog-post.html

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s