میں عمر کے رستے میں چپ چاپ بکھر جاتا

عزم بہزاد

میں عمر کے رستے میں چپ چاپ بکھر جاتا

اک دن بھی اگر اپنی تنہائی سے ڈر جاتا

میں ترک تعلق پر زندہ ہوں سو مجرم ہوں

کاش اس کے لیے جیتا اپنے لیے مر جاتا

اس رات کوئی خوشبو قربت میں نہیں جاگی

میں ورنہ سنور جاتا اور وہ بھی نکھر جاتا

اس جان تکلم کو تم مجھ سے تو ملواتے

تسخیر نہ کر پاتا حیران تو کر جاتا

کل سامنے منزل تھی پیچھے مری آوازیں

چلتا تو بچھڑ جاتا رکتا تو سفر جاتا

میں شہر کی رونق میں گم ہو کے بہت خوش تھا

اک شام بچا لیتا اک روز تو گھر جاتا

محروم فضاؤں میں مایوس نظاروں میں

تم عزمؔ نہیں ٹھہرے میں کیسے ٹھہر جاتا

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s